December 16

دسمبر 16 کے اہم تاریخی واقعات

دسمبر 16، عیسوی کیلینڈر کے لحاظ سے، سال کا تین سو پچاسواں دن ہے۔عام دنوں جیسا ہی ایک دن، جب پوری دنیا میں موسم سرما اپنی شدت کی انتہا پر ہوتا ہے۔ سال رواں دو ہفتے بعد ختم ہونے کو ہے، اور نیا سال محض دو ہفتے کی دوری پر۔ عمومی دنوں جیسا ہی ایک دن ہے بظاہر دسمبر 16، لیکن دنیا کی تاریخ، اور خاص طور پر، پاکستانی تاریخ کے تناظر میں اس دن کو، عام دنوں جیسا ایک دن نہیں کہا جا سکتا۔

دسمبر 16 اور عالمی تاریخ

قبل مسیح عہد سے لیکر اب تک، دسمبر 16، عمومی طور پر، غیر معمولی واقعات کے ظہور کا دن رہا ہے۔ اگر صرف پچھلے سو سوا سو سال کی بات کر لی جائے، تو بھی اس مفروضے کو تقویت ملتی ہے۔

دسمبر 16، 1903، میں تاج محل پیلیس ہوٹل کا آغاز ہوا۔ ہوٹل تاج کا شمار برصغیر پاک و ہند کے ابتدائی فایئو سٹارز ہوٹل میں کیا جاتا ہے۔ اب بھی تاج کو انڈیا کے ایک عالمی درجہ رکھنے والے ہوٹل میں شمار کیا جاتا ہے، جسے اب باقاعدہ تاریخی ورثے کی حیثیت حاصل ہے۔ یہ وہی ہوٹل تاج ہے، جہاں 2008 کے ممبئی حملے ہوئے، جسے ہندوستانی تاریخ میں ایک سیاہ دن کا درجہ حاصل ہے۔

دسمر سولہ 1907 بھی عالمی تاریخ کا ایک اہم دن ہے۔ اس روز امریکی بحری افواج نے، گریٹ وائٹ فلیٹ کے نام سے پوری دنیا کا سمندری سفر شروع کیا۔ یہ سفر تقریبا دو سال بعد فروری 2009 میں اختتام کو پہنچا۔ اس عالمی سمندری مہم کے ذریعے، امریکہ نے اپنی آبی برتری کی دھاک بٹھانے کی کوشش کی۔

دسمبر 16، 1912 کو، سلطنت عثمانیہ اور متحدہ یونانی بحری افواج کے درمیان، ایک بہت بڑا بحری معرکہ ہوا۔ اس معرکے کا شمار، تاریخ عالم کے بڑے سمندری معرکوں میں کیا جاتا ہے۔ اس سمندری جنگ کو پہلی بلقان جنگ میں ایک مرکزی حیثیت حاصل ہے۔ جس میں سلطنت عثمانیہ کی بحری افواج کو شکست ہوئی۔

دسمبر 16، 1914، کو جرمن نیوی نے، جنرل فرانز ہپر کی سربراہی میں، برطانیہ کے پورٹ سٹیز پر حملہ کیا۔ اس حملے میں سینکڑوں شہری مارے گئے۔ پہلی عالمی جنگ کے تناظر میں، اس واقعے کو جرمن کی جز وقتی فتح اور برطانیوں کی جز وقتی شکست تسلیم کیا جاتا ہے۔ ۔

دسمبر 16، 1920، کو چین کے صوبے گانسو میں شدید زلزلہ آیا۔ اس زلزلے میں دو لاکھ سے زائد لوگ لقمہ اجل بنے۔ اس زلزلے کو بیسویں صدی کا ایک بڑا زلزلہ مانا جا تا ہے۔

پولینڈ کے صدر گیبریئل نارووچ کو قتل کردیا جاتا ہے۔ دسمبر سولہ 1922 کو ہونے والے اس سیاسی قتل کا پہلی عالمی جنگ کے نتائج، اور دوسری عالمی جنگ کے اسباب سے گہرا تعلق ہے۔

دوسری عالمی جنگ کے تناظر میں، جاپانی افواج نے، دسمبر 16، 1941 کو ملائیشیا کی ایک ریاست میری ساراواک پر حملہ کیا، اور اس پر قبضہ کر لیا۔ ایکسس کے تناظر میں، اس فتح کو جاپان کی ایک جز وقتی فتح تصور کیا گیا۔

دسمبر 16، 1942، نازی جرمنی نے یورپی یہودیوں کو شہر بدر کر کے،، آسووچ کے قیدی کیمپ میں چلے جانے کے احکامات جاری کئے۔ اس فرمان کو، دوسری عالمی جنگ کے، یہودی ہولو کاسٹ میں ایک اہم فرمان کی حیثیت حاصل ہے۔

دسمبر 16، 1944، کو جرمن افواج نے بلج کی جنگ کا آغاز کیا۔ دوسری عالمی جنگ کے تناظر میں، مغربی محازوں پر، اس حملے کو جرمن افواج کا آخری بڑا حملہ تسلیم کیا جاتا ہے۔

دسمبر 16، 1950، امریکی صدر ٹرو مین نے، کوریا پر چینی پیش قدمی کے نتیجے میں، ایمر جنسی لگانے کا فرمان جاری کیا۔

ویت نام میں پھنسی امریکی افواج کیلئے، جنرل ولیئم ویسٹ مور نے دسمبر 16، 1965، کو امریکی سیکرٹری دفاع کو خط لکھا، اور ڈھائی لاکھ مزید فوج کا مطالبہ کیا

دسمبر 16 اور پاکستانی تاریخ

دسمبر 16، پاکستانی قومی تاریخ کا ایک سیاہ دن ہے۔ 16 دسمبر 1971 کو ڈھاکہ کا سقوط ہوا، جس سے دنیا کا سب سے بڑا مسلم ملک مشرقی اور مغربی دھڑوں میں ہمیشہ کیلئے تقسیم ہو کر، دو ممالک کی شکل اختیار کر گیا۔ ملکوں کا بننا یا تقسیم ہونا تو شائد اتنا بڑا حادثہ نہ ہو، مگر لاکھوں انسانوں کا قتل عام اور لاکھوں پاکستانی فوجیوں کی اسیری، پاکستانی قومی تاریخ کا ایک بڑا سانحہ ہے، جسے تاریخی شعور کبھی بھی فراموش نہیں کر پائے گا۔

دسمبر 16، 2014، انسانی تاریخ، اور خاص طور پر پاکستانی تاریخ کا ایک دلسوز دن ہے۔ پشاور کے اے پی ایس پبلک سکول میں، دہشت گردوں کی اندھی گولیوں سے، 140 سے زائد بچے، سکول سے سیدھے خدا کے پاس جنت میں چلے گئے۔ عجیب دشمن تھا، جو بچوں سے لڑنے آیا تھا۔ ” بڑا دشمن بنا پھرتا ہے، جو بچوں سے لڑتا ہے”، ٹھیک کہا ہے شاعر عمران رضا نے۔ دسمبر سولہ ایک لال دن ہے، معصوموں کے لہو سے لال دن،۔

FOODNCULTURETV RESEARCH DESK / FNCTV

foodnculture.tv

foodnculturetv@gmail.com

feedback@foodnculture.tv

President of PolandGabriel Narutowicz is assassinated by Eligiusz Niewiadomski at the Zachęta Gallery in Warsaw.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *